Urdu Poetry 13

غمِ عاشقی تیرا شکریہ


کبھی رُک گئے کبھی چل دئیے

کبھی چلتے چلتے بھٹک گئے


یونہی عمر ساری گزار دی

یونہی زندگی کے ستم سہے


کبھی نیند میں کبھی ہوش میں

تُو جہاں ملا تجھے دیکھ کر


نہ نظر ملی نہ زباں ہلی

یونہی سر جھکا کے گزر گئے


کبھی زلف پر کبھی چشم پر

کبھی تیرے حسیں وجود پر


جو پسند تھے میری کتاب میں

وہ شعر سارے بکھر گئے


مجھے یاد ہے کبھی ایک تھے

مگر آج ہم ہیں جدا جدا


وہ جدا ہوئے تو سنور گئے

ہم جدا ہوئے تو بکھر گئے


کبھی عرش پر کبھی فرش پر

کبھی اُن کے در کبھی در بدر


غمِ عاشقی تیرا شکریہ

ہم کہاں کہاں سے گزر گئے


(رانا شعبان)


Post a Comment

0 Comments